Type to search

تلنگانہ

نظام ِحیدرآباد‘ کرنل امیرالدین اورخلافت عثمانیہ کے مخفی دستاویزات

خلافت عثمانیہ

ڈاکٹرسیدحبیب امام قادری


خلیفتہ المسلمین عبدالمجید ثانی کی دختر خدیجہ خیریہ عائشہ در شہوار سلطان المعروف شہزادی در شہوار (سلطان سلطنت عثمانیہ کی شاہی خواتین کے لیے استعمال ہوتا ہے) (پیدائش: 26 جنوری 1914ء، استنبول انتقال: 7 فروری 2006ء، لندن) آخری خلیفۃ المسلمین عبد المجید ثانی کی صاحبزادی تھیں۔ وہ جس وقت پیدا ہوئیں اس وقت سلطنت عثمانیہ اپنے آخری ایام گن رہی تھی۔ 1924ء میں خلافت کے خاتمے کے بعد ان کے والد عبد المجید ثانی کو ملک بدر کر دیا گیا اور وہ جنوبی فرانس میں رہنے لگے۔12 نومبر 1931ء کو نیس، فرانس میں ان کی شادی آخری نظام حیدرآباد میر عثمان علی خان کے بڑے صاحبزادے اعظم جاہ سے ہوئی۔1933ء میں ان کے بطن سے مکرم جاہ اور 1936ء میں مفخم جاہ پیدا ہوئے۔ دونوں نے برطانیہ میں تعلیم حاصل کی اور ترک خواتین سے شادیاں کیں۔

 

 

شہزادی در شہوار نے آل عثمان کے گھرانے میں خلیفتہ المسلمین کے چشم وچراغ کی پروارش کی ذمہ داری لی۔ترکی کے خلیفہ عبدالمجید ثانی کی اکلوتی بیٹی در شہوار جدید تعلیم اور مارشل آرٹس کی تربیت کے ساتھ پرورش پائی۔ان کے ذہن کے ایک گوشہ میں عروج اسلام کی تاریخ اورعثمانیہ خلافت کی زوال کابہت بڑا اثررہا۔ اس لیے وہ اپنے آخری ایام غلام‘ سلطنتوں سے دورلندن میں گزارنا پسند کیا ۔نظام کے صاحبزداے کے ساتھ ان کی شادی 17کروڑحق مہرکے ساتھ طے پائی ۔ اور اس کے بعد ولیعہد کی پیدائش کے بعد انہیں نظام کے تخت کا وارث قرار دیااور آخری خلیفتہ المسلمین نے اسے اپنی وصیت میں ان کا نام اپنے جانشین کے طور پر رکھاتھا۔ اس وقت یہ خیال کیا جاتا تھا کہ نظام، اپنے وقت کے دنیا کے سب سے امیر ترین حکمران اور معزول خلیفہ کے درمیان ازدواجی اتحاد ایک مسلم حکمران کے ظہور کا باعث بنے گا جو عثمانی حکمرانوں کی جگہ عالمی طاقتوں کے لیے قابل قبول ہو سکے۔ سلطان شہزادی در شہوار، جو اپنے والد کی جانشینی کے لیے جدید تعلیم اور جنگی تربیت کے ساتھ پرورش پائی، حیدرآباد میں اپنی آمد کے بعد سب سے زیادہ مقبول چہرہ بن گئیں۔

 

 

1940 میں حیدرآباد کو خلافت کی بازیابی کے لیے تیاریاں شروع کردی گئیں۔ ترکی کے آخری خلیفہ عبدالمجید ثانی نے سرزمین ہند کے دکن کے خطے میں دفن ہونے کی خواہش ظاہر کی تھی۔ ان کی خواہش کے احترام میں ان کی بیٹی درشہوارنے نظام کی مالی معاونت سےموجودہ ریاست مہاراشٹر کے شہر اورنگ آباد میں ایک مقبرہ بھی تعمیر کیا جو ترکی طرز تعمیر کا مثالی نمونہ ہے۔

 

 

خلیفہ کی موت دوسری جنگ عظیم کے دوران جرمن قبضے سے پیرس کی آزادی کے ساتھ ہی ہوئی۔منصوبہ یہ تھا کہ خلافت کو حیدرآباد منتقل کرکے معاہدہ لوزان کو ناکام بنایا جائے۔لندن میں ترک سفارت خانے نے انکشاف کیا کہ ترک حکومت نے برطانوی حکومت سے کہا کہ سلطنت میں کہیں بھی خلافت کی بحالی کی اجازت نہ دی جائے۔منصوبہ یہ تھا کہ نظام حیدرآباد اپنے پوتے کی جانب سے خلیفہ کےلیے باضابطہ طور پر قبول کریں جسے خلیفہ وِل بھی کہا جاتا ہے بطور عبوری خلیفہ، جسے خلیفہ عبدالمجید ثانی نے اپنا جانشین نامزد کیا تھا۔

 

 

ٹائم میگزین نے رپورٹ کیا،’’حیدرآباد کے حکمران نظام نے خود کو خلیفہ قرار دینے کی کوشش کی۔ دکن کے مسلمانوں کے لیے اس کی خواہش حیران کن تھی۔ لیکن خلیفہ کی بیٹی ‘ نظام کے وارث اورعلی برادران نے ایک’’ میٹنگ‘‘کی جوبہت سے مسلمانوں کو ایک خوش کن سوچ کے طور پر متاثر کیا۔ اگر ان نوجوانوں کی شادی ہو جائے اور ان کے ہاں مرد بچہ پیدا ہو جائے تو اس میں دنیاوی اور روحانی طاقت ایک جاہ ہوجائے گی۔ملت کوایک ’’ خلیفہ حق‘‘مل جائے گا ۔جس کی مسلمانوں کوتلاش ہے۔یہ کہا جاتا تھا کہ نظام خلافت کو امانت کے طورپرسمجھتے تھے۔ہندوستان میں، خلافت تحریک، علی برادران کی قیادت میں ایک کامیاب تحریک 1919 سے جاری تھی جس میں گاندھی جی نے بھی بڑھ چڑھ کرحصہ لیااوریہ تحریک ہندومسلم اتحاد کے لیے علمبردار ثابت ہوئی۔علی برادران اورگاندھی جی نے ملک بھرمیں اس تحریک سے ہندومسلم اتحادکوقائم کرنے میں کامیابی حاصل کی۔ جوبعدمیں آزادی ہندکے لیے اہم کردارثابت ہوئی۔اس تحریک کوگاندھی جی کی حمایت حاصل تھی۔ انگریزوں کی پالیسی ڈائیڈ اینڈ رول کے خلاف تھی اورجس نے فرقہ وارانہ ہم آہنگی کوفروغ دیا۔

 

 

جو پہلی جنگ عظیم میں شکست کے بعد سلطنت عثمانیہ اور خلیفہ کے منصب کے تحفظ کے لیے جاری تھی۔ خلافت کے خاتمے سے ہندوستانی مسلمانوں میں خوف پیدا ہوا کہ نیا خلیفہ برطانوی زیر اثر ہوگا اور اس کے بعد اسے مزید سامراجی مفادات کے لیے استعمال کیا جائے گا۔ نتیجتاً، علی برادران نے تحریک کے دیگر اراکین کے ساتھ ہندوستان کے سب سے بڑے مسلم قائدین کے پیچھے کھڑے ہو کر انہیں اگلے خلیفہ کے طور پر تسلیم کیا۔ حیدرآباد کے نظام میر عثمان علی خان اپنی رعایا کی اکثریت ہندو ہونے کے باوجود خود کو دنیا کی سب سے بڑی اور بااثر مسلم ریاست کا سربراہ تصور کرتے تھے۔ اگرچہ انہوں نے خلیفہ کا عہدہ سنبھالنے کے مطالبات کو مسترد کر دیا، لیکن انہوںاس خیال کو ترک نہیں کیا۔

 

 

جب تک کہ مکرم جاہ تخت آل عثمان وآل آصفیہ کے سنبھالنے کے قابل نہ ہوجائےاس کومخفی رکھاگیا۔ تاہم، دوسری جنگ عظیم، خلیفہ کی غیر متوقع موت، خلافت کی منتقلی کو روکنے کے لیے برطانوی راج پر ترکی کا دبائو، اور ہندوستان اور حیدرآباد میں سیاسی افراتفری نے یہ ناممکن بنا دیا کہ نظام حیدرآبادسے پیرس کے لیے روانہ ہوں، خلافت کے عہدہ کو عبوری خلیفہ کے طور پر قبول کریں اور خلیفہ عثمانیہ کی میت کو خلد آباد میں دفنانے کے لیےلے آئیں۔ہندوستان میں سیاسی افراتفری بالآخر ہندوستان کی آزادی کے بعد، بہت سے مسلمان جن میں سے دیوبند کے علمائے دین نے ہندوستانی کی آزادی کے لیے جدوجہدکی اور نظام کی خلافت کومہرلگائی ۔ دکن میں مسلمانوںنے خلافت کا خواب دیکھا۔اس طرح کے ہنگاموں کا سامنا کرتے ہوئے، خلیفہ کی فوری جانشینی ناممکن نظر آتی تھی، کیونکہ مسلم قانون کے مطابق، خلیفہ کو صرف اس وقت دفن کیا جا سکتا ہے جب اس کا جانشین اپنے عہدے پر فائز ہو کر منصب خلافت کو قبول کر لے اور یا اس کی جانشینی کا باضابطہ اعلان کرے۔ اس وقت تک خلیفہ کی تدفین ملتوی کرنے کا فیصلہ کیا گیا، ان کی لاش کو پیرس کی گرینڈ مسجد میں سردخانے میں رکھا گیا۔

 

 

پھر، 1947یں ہندوستان نے برطانوی راج سے اپنی آزادی حاصل کر لی، لیکن 1948 میں حیدر آباد کو ہندوستان میں ضم کر دیا گیا اور نظام نے اپنی سلطنت کھو دی، جب کہ خلیفہ کاجسم خاکی پیرس میں سردخانے میں رہی۔عالم اسلام میں کوئی بھی اس قابل نہیں تھا کہ نظام کے پوتے کو اس عہدے کے لیے قانونی طور پر چیلنج کر سکے جیسا کہ اس کا نام خلیفہ کی وصیت میں دیا گیا تھا، اور نہ ہی نظام عبوری خلافت اور خلافت کے خطوط کو قبول کرنے کے لیے باضابطہ طور پر پیرس جا سکتا تھا اور اس کے ذریعے خلیفہ کا انتظام کر سکتا تھا۔ جنازہ، اور اس کے پوتے کو مرحوم کاخلیفہ کامنصب داراور جانشین قرار دیں۔ناقابل یقین طور پر، خلیفہ کی لاش پیرس کی گرینڈ مسجد میں مزید 10 سال تک رہی، بغیر دفنائے گئے، یہاں تک کہ 1954 میں ایک پیش رفت کی بات چیت ہوئی۔1954 میں خلیفہ کی بیٹی اور اب معزول نظام حیدرآباد کی بہو شہزادی در شیوار نے اپنی بہن شہزادی نیلوفر کے ذریعے ایک معاہدہ کیا۔

 

 

اس معاہدے میں، نوجوان مکرم جاہ کے خلافت کی کارروائی جو کہ عبوری خلیفہ اعلی حضرت نظام حیدر آباد کے پاس امانت تھی جب تک کہ جاہ بھی اس کی جانشینی کے لیے تیار نہ ہو جائیں، اب اپنا راستہ اختیار کریں گے۔ آخر کار حیدرآباد واپس چلے گئے، لیکن خلیفہ کی باقیات کو منجمد نہیں کیا جائے گا، مسلم دنیا کی اجتماعی مرضی کو تسلیم کرتے ہوئے، خاموشی کے ذریعے 1924 کے بعد سے سیاسی خلافت کو ختم کرنے کے لیے خلیفہ کی باقیات کو ایک بے نشان قبر میں سپرد خاک کیا جائے گا، تاکہ ہندوستان میں اس کے اور اس کے جانشین کے درمیان رابطہ ٹوٹ جائے۔یہ معاہدہ کسی اور کے ساتھ نہیں بلکہ سعودی عرب کے شاہ سعود بن عبدالعزیز آل سعود کے ساتھ کیا گیا تھا، جس نے مدینہ میں آخری خلیفہ کو البقیع قبرستان میں نظام اور خلیفہ کی بیٹی کی خواہش کا احترام کرتے ہوئے دفن کرنے کی اجازت مشروط کر دی ۔ بادشاہ نے باضابطہ طور پر نظام کی جانب سےفرمان کو قبول کیا، جس نے انہیں اپنے پوتے مکرم جاہ کی جانب سے عبوری اختیار کے طور پر قبول کرنا تھا۔اس کے بعد خلافت کےمنصب کو شاہ سعود کے ذریعہ حیدرآباد کے نظام اعلی کے لئے امانت میں رکھا گیا تھا، اور نظام کو اس کی تدفین سے پہلے خلیفہ کا عبوری جانشین قرار دیا گیا تھا، اس طرح مذہبی قانون کے تقاضوں کو پورا کیا گیا تھا۔البقیع میں ایک بے نشان قبر میں خلیفہ کی تدفین کے بعد، دو مقدس مساجد کے متولی شاہ سعود پھر معزول نظام سے ملاقات کے لیے حیدرآبادآئیں۔ 5 دسمبر 1955 کو خادم حرمین شریفین شاہ سعود بن عبدالعزیز آل سعود نے نظام حیدرآباد کے معزول نظام خلافت کے منصب کے لیے نظام کے ملٹری سکریٹری کی موجودگی میں ایک میٹنگ کی۔

 

نظام اور خلیفہ کے انتظامات کا آخرکار احساس ہوا، سوائے ایک معمولی تفصیل کے، نظام اس دوران حکومت سے دستبردارہوگئے،اوران کی ریاست ہندوستان میںضم ہوگئی اوروہ راج پرمکھ کی حیثیت عہدہ سنبھالا اور مکرم جاہ کواپناولی عہدمقررکیا۔اس طرح سلطنت آصفیہ کااختتام ہوگیا ۔مکرم جاہ کی جانشینی کو حکومت ہند نے نظام ہفتم کے طورپر قبول کیا۔

 

لہذا، شاہ سعود کی جانب سے خلافت کے ختم شدہ منصب کے دستاویز موصول ہونے کے بعد، نظام نے شکست قبول کرلی، چاہے وقتی ہی کیوں نہ ہو، اور کاغذات اپنے ملٹری سیکریٹری لیفٹیننٹ کرنل سید امیر الدین کو سونپ دیے، جو منتقلی کے اس میٹنگ میںگواہ تھے۔

نظام نے اپنے قابل اعتماد ملٹری سیکرٹری لیفٹیننٹ کرنل سیدامیرالدین کو ہدایت کی کہ ، خلافت کےدستاویزجوخلیفہ عبدالمجید ثانی سے حاصل ہوئے تھے۔صرف امام مہدی ؑکے ہاتھ ہی دئیے جائیں۔کیوںکہ انہوں نےاس بات کادکھ ظاہرکیا تھاکہ ریاست حیدرآباد اب نہیں رہی نہ ہی اپنے نبیرہ اورخلیفہ عبدالمجیدثانی کےنبسہ جانشین مکرم جاہ کوئی گدی اور سلطنت کے حاکم ہوںگےاورخلافت کے منصب کابوج سنبھال پا ئے گے ۔عقیدہ نظام آصف جاہ سابع وخاندان آصفیہ میںائمہ اہلبیت سے محبت وعقیدت تھی۔اس بات کاثبوت آصف جاہ سابع اوران کے صاحبزادگان کے کلاموں اورکارناموں میں نظرآتاہے۔جس کی مثال رہنمائے دکن کے خاندان کے پاس پائے جانے والے مخطوطات اور غیرشائع کلام وسلام میں نظرآتاہے۔ جس میں اعظم جاہ(خلیفہ کے دامادومکرم جاہ کے والد) نے عقیدت کااظہارکچھ یوں کیا۔
’’بارہ مہینو ں میں ہوں تذکرہ بارہ امام کا‘‘

معلوم یہ ہواکہ خاندان آصفیہ سنی عقیدہ ‘ نسبت ِصدیقی ومسلک حنفی ہونے کے باوجود بارہ اماموں سے عقیدہ ومحبت رکھتے تھے اورخاصہ آصف جاہ سابع امام آخری زماں کے منتظرتھے۔جس کی گواہی ان کے قریبی رفقادیتے ہیں۔

آصف جاہ نظام سابع کہا کرتے تھے کہ ترکی خلافت اوربعدمیں آصفیہ سلطنت کے زوال کے بعدمجھے ایسا محسوس ہوتا ہے کہ قیامت قریب ہے ظہورآخری زماں کی آمد کاوقت آچکا ہے اوراس عظیم منصب کوصرف امام آخری الزماں ہی سنبھال سکتے ہیں اوراسی وجہ سے ان کوتلاش کیا جائےاورانتظارکیا جائے ۔یہ منصب کے دستاویزانہی کے حوالے کئے جائیں۔اس عظیم کارنامہ کوانجام دینے کے لیے ریاست حیدرآباد میں نظام کے قریب وفاداراورپُراعتماد عزت داروتعلیم یافتہ گھرانہ جس نے سلطنت حیدرآباد کی فلاح وبہبود میں نمایاں رول اداکیا‘ جوکہ خودائمہ اہلبیت سے گیارویں امام ‘امام حسن الاعسکری ؑ کی نسل سے ہیں۔ اس ہی خاندان کے ایک بزرگ جو سکندریارجنگ ثانی جس کاتاریخی قصہ مشہور ہے کہ (کرنل سید امیرالدین عسکری سادات تھے۔جوکہ سید سکندر یار جنگ ثانی ‘ نواب سید محمدمیرالدین خان بہادر کے پڑپوترے ہوتے ہیں۔سید سکندریارجنگ ثانی کے بارے میںمشورہے کہ انہوں نے آصف جاہ ششم نواب میرمحبوب علی خاں کوسانپ کاعمل بخشا تھاجوکہ ریاست حیدرآباددکن میں کافی مشہورتھا۔ ریاست کے حدود میں جس کسی کوبھی سانپ ڈس لے تو وہ یہ کلمات ’’محبوب علی پاشاہ کی دوہائی‘زہراترجا ‘‘سےسانپ کااثرختم ہوجائے گا۔یہ شاہی فرمان16؍رمضان 1321ہجری میں جاری کیا۔اگررعایا میں سے کسی کوسانپ ڈس لے توسانپ گزیدہ کوکسی وقت بھی رسائی ملنی چاہیے ۔چنانچہ متعددبارایسا ہوا کہ آپ کونیندسے بیدارکیاگیا۔(بحوالہ تزکیہ آصفیہ)اب ان ہی کے پرپوترے کرنل سیدامیرالدین صاحب کواس ذمہ داری کو ایک امانت کے طورپر سونپا گیا۔

 

یہاں اس بات کاتذکرہ ضروری ہے کہ کرنل سیدامیرالدین صاحب کے اجدادآصف جاہ اول کے ساتھ حیدرآبادمنتقل ہوئے تھے)اس گھرانے کواس کے بعد نظام کے ملٹری سکریٹری نے 1955 کے بعد سے ہدایات کے مطابق دستاویزات کو اپنے پاس سنبھالے رکھا۔

 

نظام نے اپنے خانوادے کے اہم اراکین اور ملٹری سیکرٹری کی سرپرستی میں 1967 میں مکہ روانہ کیا۔ ملٹری سکریٹری کی یہ آخری مہم تھی کہ،امام محمد المہدیؑ کو تلاش کرنے اور ان کے پاس خلافت کے کاغذات پہنچائیں۔

نظام کا انتقال 1967 میں اس وقت ہوا جب ان کے ملٹری سیکرٹری مدینہ میں تھے۔لیفٹیننٹ کرنل سیدامیرالدین اپنے نظام کے لیے امام المہدی منتظرؑ کو تلاش کرنے میں ناکام رہے۔مایوس ہو کر حیدرآباد واپس آگئے ۔ لیفٹیننٹ کرنل سیدامیر الدینؒ نے نوجوان مکرم جاہ کا مشاہدہ کیا،

 

1967 میں نظام کے انتقال کے بعد، جاہ نے 1948 سے حیدرآباد کی بادشاہت کے خاتمے کے باوجود خود کو نظام VIII کا اعلان کیا۔تاہم، خلافت کے خطوط کے بغیر، وہ اپنے آپ کو خلیفہ کے ختم شدہ لقب کا وارث قرار دینے سے قاصر تھے جسے وہ اپنے نانا سے وراثت میں ملے تھے،۔
لیفٹیننٹ کرنل سید امیرالدین نے مسلم دنیا کا سفر کرنے اور ملت کی اصلاح کے لیے کام کرنے کی دعوت محسوس کی، تاکہ اپنی زندگی میں سماجی اور سیاسی انحطاط کو دوسروں کی حالت زار بننے سے روکا جا سکے۔اس طرح، آپ نےمحسوس کیاکہ ہندوستان چھوڑنا ضروری ہے لیکن مکرم جاہ نے ابھی تک خلافت کے منصب کے لیے ان سے رابطہ نہیں کیا تھا۔لہٰذا، حیدرآباد سے اپنے آنے والے سفر کی تیاری کے لیے، نظام مرحوم کے ملٹری سکریٹری نے آل رسولﷺ کے ایک قابل ذکر اولادسید لطیف الدین قادریؒ سے مشورہ کیا جو حیدرآباد میں رہتے تھے، اور وہ مسلم دنیا اور خلافت کی حالت زار پر بھی بہت گہری نظر رکھتے تھے۔

 

 

سید لطیف الدین قادریؒ نے نجف، کربلا، سمرہ اور بغداد کے سفر کے دوران بھی امام مہدیؑ کو تلاش کیا۔مزید برآں، انہوں نے مراکش کے بادشاہوں، ہاشمیوں، عظیم الشان شریفوں اور مکہ کے امیروں، حجاز کے بادشاہوں، اردن کے بادشاہوں، شام اور عراق کے بادشاہوں، فیض کے ادریسیوں، اسپین کے حمودیوں، اسپین کے حکمام کے ساتھ مشترکہ آبا اجداد ۔ لیبیا کے بادشاہ ادریس اول۔سے شجرہ خاندان سب سے ملتا ہے ۔ دونوں نے اس پر غور کیا کہ کیا کرنا ہے اور یہ طے پایا کہ نظام کا ملٹری سیکرٹری اپنے بڑے بیٹے کی شادی سید لطیف الدین قادریؒ کی سب سے چھوٹی بہن سے کریں گے، اور بات چیت کے ایک حصے کے طور پر خلافت کےدستاویزات اس کے پاس امانت میں جمع رہے گے۔دونوں نے فیصلہ کیا کہ ختم شدہ خلافت کے دستاویزات اس ازوداجی تعلقات کے بعد ملٹری سیکرٹری کی اولاد میں ایک امانت کے طور پر محفوظ رہیں گے جب تک کہ وہ مکرم جاہ یا منتظر مہدیؑ کو نہیں پہنچائے جاتے۔

سیدلطیف الدین قادریؒ کے ولد سیدیوسف الدین صاحب رہبردکن کے بانی ومدیراعلیٰ تھے۔رہبردکن دورآصفیہ میں ملی ترسیل کاایک اہم ترین وسیلہ تھا۔جس نے نظام آصف جاہ کی شہرت وبلندی کوعالمی سطح پرپہنچایا۔بعدآزادی یہ اخباررہنمائے دکن کے نام سےدورحاضرکاترجمان ہے ۔جس کی خدمات سیدلطیف الدین قادریؒ اورسیدوقارالدین قادری نے بطورمدیراعلیٰ کئے ۔خلافت کے دستاویزان کے مکان میں موجودتھے۔ جس کاغذات کامشاہدہ کرنے الام اعظم جامعہ الزہر‘ مسجد اقصیٰ کے تین مفتی اعظم ا ورامام الحرم مکتہ المکرمہ کے علاوہ فلسطینی صدر یاسر عرفات جنہوں نے دو مرتبہ رہائش گاہ کا دورہ کیا۔2012 میں نظام کے ملٹری سکریٹری کا انتقال ہو گیا۔کہاجاتا ہے کہ ہرحج اکبر میں لیفٹیننٹ کرنل سیدامیرالدین ؒ منتظر مہدیؑ کی تلاش میں مکہ کا سفر کرتے تھے، جسے وہ ڈھونڈنے اور امانت پہنچانے کی امید رکھتے تھے۔اس اثنامیں انہوں نے8ہزارسے امریکی افرادکومسلمان کیا۔2021 میں حیدرآباد میں جمع شدہ دستاویزات کے آخری سرپرست و روزنامہ رہنمائے دکن کے مدیراعلیٰ سیدوقارالدین قادریؒ کا انتقال ہو گیا۔ ان کی وفات کے بعد، ان کے سامان کی تلاش کے دوران ان کی لواحقین کو ایک فائل ملی جس میں پرانے خطوط اور عربی میں کچھ دستاویز موجود تھی جس پر مکہ کے مختلف مفتیان کرام کے دستخط تھے۔


بشکریہ ۔ روزنامہ رہنمائے دکن

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *