Type to search

بزنس

دس بینکوں کو ملاکرکے چار بینک بنانے کے تجویز کو منظوری

بزنس ڈسک،4مارچ(اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) وزیر اعظم نریندر مودی کی زیرصدارت کابینہ کے اجلاس میں 10 بڑے پبلک سیکٹر بینکوں (پی ایس یو بینک انضمام) کے انضمام کو منظوری مل گئی ہے، وزارت خزانہ کی طرف سے 30 اگسٹ 2019 کو 10 سرکاری بینکوں کے انضمام کا اعلان کیا گیا تھا، اب اسکو لیکر حکومت اسی ہفتہ نوٹیفیکیشن جاری کرسکتی ہے، اس انصمام کے بعد ملک میں چار بڑے بینک بن جائیں گے، نئے بینک 1 اپریل 2020 سے وجود میں آسکتے ہیں-

میڈیا رپورٹس کے مطابق انضمام کے بعد بینکوں کے نام بھی بدل سکتے ہیں- حالانکہ حکومت کی طرف سے ابھی تک کوئی بھی بیان جاری نہیں ہوا ہے- وزیر داخلہ نرملا نے بینکوں کے انضمام کا اعلان کرتے ہوقت کہا تھا کہ اس انضمام کے بعد ملک میں حکومت بینکوں کی تعداد 12 رہ جائیں گی، سال 2017 میں ملک میں حکومتی بینکوں کی تعداد 27 تھی، اس سے پہلے دونوں بینک او وجئے بیک کا بینک آف بروڈا میں انضمام ہوا تھا-
مرکزی کابینہ نے عوامی زمرے کے 10 بینکوں کو ضم کرکے چار بینک بنانے کی تجویز کو منظوری دے دی ہے۔
وزیر اعظم نریندر مودی کی صدارت میں بدھ کو یہاں منعقد مرکزی کابینہ کے اجلاس میں اس تجویز کو منظوری دی گئی۔

اجلاس کے بعد وزیر خزانہ نرملا سیتا رمن نے یہاں ایک پریس کانفرنس میں بتایا کہ بینکوں کے انضمام کے بہتر نتائج سامنے آئے ہیں۔وجیہ بینک، دینا بینک اور بڑودا بینک کے انضمام سے صارفین کو فائدہ ہوا ہے اور قرض کی تقسیم کا وقت 27 دن سے کم ہو کر 11 دن رہ گیا ہے۔

انهوں نے بتایا کہ اورینٹل بینک آف کامرس اور یونائیٹیڈ بینک آف انڈیا کا انضمام پنجاب نیشنل بینک میں کیا گیا ہے۔ سنڈیکیٹ بینک کو کینرا بینک میں ملا دیا جائے گا۔ آندھرا بینک اور کارپوریشن بینک کا انضمام یونین بینک آف انڈیا میں کیا جائے گا۔ الہ آباد بینک کو انڈین بینک میں ملایا جائے گا۔ بینکوں کا انضمام یکم اپریل 2020 سے نافذ ہوگا۔

Tags:

You Might also Like