Type to search

تلنگانہ

تلنگانہ میں چھ تبلیغی ارکان کی فوت، تمام متشبہ افراد کی جانچ ضروری

حیدرآباد،31مارچ(اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) تلنگانہ میں کورونا وائرس (کوویڈ ۔19) نے وائرل شکل اختیار کرلیا ہے۔ ریاست میں کورونا وائرس انفیکشن سے 6 لوگوں کی موت ہوگئی ہے۔ یہ چھ لوگ دہلی کے نظام الدین میں منعقد مرکزمیں شامل ہوئے تھے۔ دہلی میں ایک سے 15 مارچ تک منعقد پروگرام میں کئی ملکوں کے لوگوں نے حصہ لیا تھا۔ اس واقع کے ساتھ ہی تلنگانہ حکومت اور چوکس ہوگئی ہے۔

یکم تا 15 مارچ تک ملیشیا ، انڈونیشیا ، سعودی عرب اور کرغزستان سمیت 2 ہزار سے زائد مندوبین نے تبلیغی جماعت میں شرکت کی۔ اس مدت کے بعد بھی ، 1،400 افراد یہاں ٹھہرے ہوئے تھے۔ تلنگانہ کے چیف منسٹر آفس کی طرف سے یہ معلومات دی گئی ہے۔ اس سے پہلے پیر کو اس گروپ میں شامل 300 لوگوں کو کورونا وائرس کی جانچ کے لیے دہلی کے الگ الگ ہاسپٹل میں لے جایا گیا۔ ادھر نظام الدین کی مرکز میں شامل ہوئے انڈومان کے 9 لوگ اور ان سے ایک کی بیوی کورونا سے متاثر پائی گئی۔

 

ان میں سے دو کی گاندھی ہاسپٹل میں موت ہوگئی۔ جبکہ ایک نے اپولو اور ایک نے گلوبل ہاسپٹل میں دوم توڑ دیا۔ اسکے علاوہ نظام الدین اور گدوال ہاسپٹل میں علاج کے لیے شریک ہوئے ایک ایک شخص کی موت ہوگئی۔

یہ لوگ دہلی میں 13 سے 15 تک اجتماع میں شامل ہوئے تھے۔ حکومت کو بغیر اطلاع دیئے ہی یہ لوگ مذہبی پروگرام میں حصہ لیکر لوٹ آئے تھے۔ انکےعلاوہ انکے ساتھ دیگر لوگ بھی مرکز میں شامل ہوئے تھے۔

دوسری طرف انکے رابطے میں آئے دیگر لوگوں کا مختلف ہاسپٹل میں علاج جاری ہے۔ اسی دوران حکومت نے اسی سلسلہ میں حکومت نے انکی ایک بار پھر اسپیشل ٹیم سے ٹیسٹنگ کرنے کا حکم دیا ہے۔ ساتھ ہی انکے رابطے آنے والے لوگوں سے اپیل کی ہے کہ وہ خود آگے آئے تاکہ علاج کیا جاسکے۔

دہلی پولیس نے سی آر پی ایم اور محکمہ صحت کے عہدیداروں نے تبلیغی جماع کےمرکز میں بڑے پیمانے پر کاروائی کرتے ہوئے اسے بند کردیا اور اپنے گھیرے میں لے لیا اور کئی افراد طبی معائنے کئے۔ اسی دن تلنگانہ میں 6 تبلییغی ارکان کے انتقال کی توثیق کی گئی ہے۔ اسکے ساتھ ہی ریاست میں کوویڈ 19سے فوٹ ہونے والوں کی تعداد 7 ہوگئی ہے جبکہ مصدقہ متاثرین کی تعداد 61 ہے۔

دہلی حکومت نے پولیس کو مرکز کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کے احکام دیئے ہیں۔ نظام الدین معاملے کو لیکر دہلی حکومت کی طرف سےجاری بیان میں کہا گیا ہے کہ 24مارچ کو پورے ملک میں کورونا وائرس کی وجہ سے لاک ڈاؤن کا اعلان کیا گیا تھا۔ اسکے ہوٹل ، گیسٹ ہاؤس ،ہاسٹل اور اس طرح کے اداروں کے مالکان اور منتظمین کی یہ ذمہ داری تھی کہ وہ سوشل ڈسٹینسنگ کا پوری طرح فالو کریں، ایسا لگتا ہے کہ یہاں اسکو فالو نہیں کیا جارہا تھا۔ یہاں کورونا کو لیکر جاری کی گئی گائیڈ لائن کی خلاف ورزی کی گئی۔ اسکے خلالف سخت کاروائی کی جائے گی۔ لاک ڈاؤن کے دوران اس طرح کے اجتماع سے بچنا ہر شہری کی ذمہ داری تھی اور یہ ایک مجرمانہ فعل کے علاوہ اور کچھ نہیں ہے۔

Tags:

You Might also Like