Type to search

تلنگانہ

تلنگانہ میں 24 گھنٹے کا جنتا کرفیو جاری، سبھی دکانیں بند،سڑکیں سنسان، گھروں میں بیٹھے لوگ

 حیدرآباد،22مارچ(اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) کل تک جو شہر صبح سے اپنی رفتار پکڑ لیتا تھا آج وہ تھم گیا ہے۔  حیدرآباد شہر کو وائرس کی نظر لگ گئی ہے۔ اور شہر کی سڑکیں خالی نظر آرہی ہے۔ سڑکوں پر ٹرافک کا شور، ہارون بجاتی بسیں، ٹرین، پیدال چنے والے راہگیر سبھی آج سڑکوں سے غائب ہے۔ کئی دنوں سے اسکول بھی بند ہیں۔ ایس ایس سی امتحانات بھی ملتوی کردیئے گئے ہیں۔ اور جنتا کرفیو ہے۔

تلنگانہ میں 24 گھنٹے کا جنتا کرفیو جاری ہے۔ پی ایم مودی نے حال ہی میں ملک کے لوگوں سے جنتا کرفیو کا مطالبہ کیا تھا۔ اسی مطالبہ کی وجہ سے تلنگانہ حکومت نے ایک قدم اور آگے بڑھاتے ہوئے جنتا کرفیو کو 24 گھنٹے تک لاگو کرنے کا اعلان کیا ہے۔

اسی سلسلہ میں تلنگانہ میں صبح 6 بجے سے جنتا کرفیو شروع ہوا ہے۔ جو اگلے دن صبح 6 بجے تک جاری رہے گا۔ حیدرآباد اور سکندر آباد شہر کی سڑکیں صبح سے ہی سنسان پڑی ہے۔ ہر دن صبح صبح نکلیس روڈ ، پبلک گارڈن، اور دیگر مقامات پر نظر آنے والی بھیڑ آج غائب ہے۔ کوئی بھی شخص دیکھائی نہیں دیا۔ پیپر والے ، دودھ سپلائی کرنے والے اور کچھ گاڑیوں پر دیکھائی دیئے۔ ٹرانسپورٹ کارپوریشن کی بسیں اور میٹرو ریل ڈپو بھی سنسان نظر آئے۔

جنتا کرفیو کی وجہ سے ایم جی بی ایس ، جی بی ایس، سکندرآباد ریلوئے اسیشٹن، نامپلی اور کاچی گوڑہ ریلوئے اسیشٹن بنا مسافروں کے خالی پڑا ہوا ہے۔
تلنگانہ میں ہاسپٹل، میڈیکل شاپ، پھل، ترکاری، پیٹرول پمپ کو بند سے چھوٹ دی گئی ہے۔ میڈیا کو جنتا کرفیو سے چھوٹ دی گئی ہے۔ انکے علاوہ ایمبولینس ، فائر سرویس ، بجلی، اور تکنیکی خدمات کے ملازمین ہمیشہ کی طرح کام کررہے ہیں۔