Type to search

تعلیم اور ملازمت

استاد قوم کا رہبر

Teacher is the leader

ازقلم ۔ محمد انور الدین صدیقی  

محمد انور الدین صدیقی

            معلم ِ انسانیت حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا۔ انما بعثت معلما۔ بے شک میں معلم بناکر بھیجا گیا ہوں۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم ہر چیز سے مزین ہونے کے باوجود معلم کے پیشے کو پسند فرمایا۔استاد کا پیشہ ایک باوقار پیشہ ہے۔ جو انسانیت اور قوم کے لیے ایک زبردست نمونہ ہے۔

 

            درس وتدریس نہایت ہی معزز پیشہ ہے۔ جو ایک صبر آزمااور ذمہ داری کے ساتھ نبھایا جاتاہے۔

 

استاد ایک ایسی شمع ہے جو تاریک دلوں کومنور اور روشن کرتی ہے۔ استاد کی مثال ایک شمع کی جیسی جو خود جلتی ہے اور دوسروں کو روشنی عطا کرتی ہے۔ استاد اپنی بے پناہ صلاحیتوں کو استعمال کرتے ہوئے طلباء میں ایک ولولہ اور جوش پیدا کرتاہے۔ تاکہ وہ اپنی قوم وملت کے لیے ایک بہترین اثاثہ ثابت ہو۔اور اپنے ملک ووطن کے لیے ایک اعزازبنئے۔ استاد اپنے فن کے ذریعہ پتھروں کو تراش کر ہیرے بناتاہے۔ آدمی کو انسان بناتاہے۔ جس کے ذریعہ بنجر زمین پر آداب واخلاق کی فصل اُگائی جاتی ہے۔ استاد کو دنیا کے تمام پیشوں کا امام کہا جاتا ہے۔

 

            علامہ اقبال رحمتہ اللہ علیہ نے فرمایاہیں۔

” سبق پھر پڑھ صداقت کا عدالت کا شجاعت کا                   لیا جائے گا تجھ سے کام دنیاکی امامت کا “

 

              ” استاد اپنے فن کی سرخی اور پسینے کی چمک سے طلباء کی شخصیت اور سیرت کی آبیاری کرتاہے۔ ماں باپ پیدا کرتے ہیں۔ جبکہ استاد وہ شخصیت ہے جو انسان کوزمین سے اُٹھا کرآسمان کی بلندیوں پر پہنچادیتاہے۔ ماں باپ جسمانی پرورش کرتے ہیں۔ جبکہ استاد اس کو عقل وفہم عطا کرتاہے۔ اسی لیے ماں باپ کے ساتھ ساتھ استاد کا درجہ بھی بلند ہے۔ استا د کو روحانی باپ بھی کہاجاتاہے۔“

 

            دنیا میں سب سے بڑا درجہ ماں پاب کا ہے۔ اور دوسرا درجہ استاد کا آتاہے۔ کیونکہ استاد اس کو علم وہنر سکھاتاہے۔ جہالت کے اندھیرے سے دور کرتاہے۔ اور انسان کو ترقی کی منزل تک پہنچاتاہے۔ اور اس کو دین ودنیا میں مرتبہ دلاتاہے۔ اس لیے جہاں تک ہو استادکی عزّت واحترام کریں۔ اور دل وجان سے اُن کی خدمت کریں۔ استاد کا کوئی حکم نہ ٹالیں۔ استاد کو ہمیشہ خوش وراضی رکھے۔ اس کی خدمت سے کبھی غافل نہ رہے۔ استاد کی نافرمانی نہ کریں۔

 

            ڈاکٹر ذاکر حسین نے کہا تھا: میرامشغلہ درس وتدریس ہے۔ اور باغبانی سے دلچسپی ہے۔ جس طرح ایک استاد بچہ کی بہترین صلاحیتوں کو اُبھارتاہے۔ اسی ہی طرح ایک باغبان زمین کی بہترین طریقہ سے آبیاری کرتاہے۔ اُنہیں اُبھارتاہے۔ اُن کی نشونما کرتاہے۔ اس لیے وہ قوم کا رہبرہے۔


نوٹ: اس مضمون کو محمد انور الدین صدیقی نے لکھا ہے۔ یہ مضمون نگار کی اپنی ذاتی رائے ہے۔ اسے بنا ردوبدل کے ساتھ شائع کیا گیا ہے۔اس سے اردو پوسٹ کا کو کوئی لینا دینا نہیں ہے۔ اس کی سچائی یا کسی بھی طرح کی کسی معلومات کے لیے اردو پوسٹ کسی طرح کا جواب دہ نہیں ہے اور نہ ہی اردو پوسٹ اس کی کسی طرح کی تصدیق کرتا ہے۔

Tags: