Type to search

صحت

یہ غلط عادتیں چھین سکتی ہے خوبصورتی

ہیلتھ ڈسک،(اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) خوبصورت دیکھنےکے لیے ہم کیا کچھ نہیں کرتے ہیں۔ مہنگے مہنگے میک ا اور اسکین کیئر پروڈکٹ خریدتے ہیں اور ڈائٹ کا خیال رکھتے ہیں۔ لیکن یہ سب کرنے کے باوجود ہماری کچھ ایسی عادتیں ہیں جو ہماری خوبصورتی کو کم کرنے میں گرہن کا کام کرسکتی ہے۔ جی ہاں، اپنی کچھ غلط عادتوں کی وجہ سے بھی متوازن غذا اور اچھی اسکین (جلد) کیر کے باوجود بھی چہرے کی خوبصورتی کم ہوسکی ہے۔

جانتے ہیں ان غلھ عادتوں کے بارے میں جو خبصورتی کو کم کرنے کا کام کرسکتی ہے۔

کافی پینے کے بعد برش کرنا

یہ بات سچ ہے کہ کافی، سوڈا اور فروٹ جوس میں موجود اسیڈ یا شوگر دانتوں کے اینمل کو نقصان پہنچاتے ہیں، لیکن آپ کو ان سب ڈرنکس کا استعمال کرنے کے فوی بعد دانتوں کو سکرب نہیں کرنا چاہیئے۔ کوئی بھی ایسڈیک فوڈ یا ڈرنک لینے کے فوری بعد برش کرنے سے دانتوں کا اینمل کمزور ہوجاتا ہے۔ اسکے بجائے پانی سے کلہ کر لیں اور ایسا کوئی مشروبات پینے کے تقریبا 1 گھنٹے بعد ہی برش کریں۔ ایسا کرنے سے آپ کے دانتوں کی خوبصورتی اور مضبوطی بنی رہتی ہے۔

سوکھے بالوں میں سوئمنگ

سوئمنگ پول کے پانی میں کئی کیمیکل ہوتے ہیں جو بالوں کو نقصان پہنچا سکتے ہیں اس لیے سوکھے بالوں میں سوئمنگ کرنے سے بچنا چاہیئے۔ سوئمنگ سے پہلے اپنے بالوں کو نل کے پانی سے تھوڑا گیلا کر لیے۔ سوئمنگ کرنے کے فوری بعد بالوں کو شیمپو ضرور کریں۔ اس سے آپ کے بالوں کی خوبصورتی ، چمک اور مضبوطی بنی رہتی ہے۔

بہت ذیادہ شیمپو کرنا

شیمپو کھوپڑی یعنی سر کی جلد سے قدرتی تیل کو ختم کرتا ہے۔ اس لیے اگر آپ بہت ذیادہ شیمپو کرتے ہیں تو اسکی وجہ سے آپ کے بال روکھے اور بے جان بن سکتے ہیں۔ اپنے بالوں کے ٹائپ کے مطابق آپ یہ طے کرسکتے ہیں کہ آپ کو ہفتتے میں کتنی بار بار دھونے کی ضرورت ہے۔ ماہرین کی مانیں تو ہر 2 سے 3 دنوں میں بال دھونا صحیح رہتا ہے۔

کان کا میل صاف کرنا

اکثر لوگ کان کا میل صاف کرنے کے لیے روئی کا استعمال کرتے ہیں، جو کہ صحیح نہیں ہے۔ کان صاف کرنے والی روئی ایئر ویکس یا میل کو اور ذیادہ اندر پہنچا دیتی ہے۔ اس سے کان کے پردے اور سننے میں مدد کرنے والی کان کی چھوٹی ہڈیوں کو نقصان پہنچا سکتا ہے۔ کان میں جمع میل یا ویکس کو صاف کرنے کے لیے آپ ڈاکٹر کی مدد لے سکتے ہیں۔

پیڈیکیور سے ٹھیک پہلے ویکسینگ

ویکسینگ کے بعد پیڈیکیور کروانے سے اسکین پر بڑی آسانی سے بیکٹریا چپک سکتا ہے۔ جسکی وجہ سے انفیکشن ہوسکتا ہے۔ ویکسینگ کروانے کے کم سے کم 24 گھنٹے بعد پیڈیکیور کروانا بہتر رہتا ہے۔ پیڈیکیور کے دوران نقصانوں کے کٹیکلز بھی کاٹنے نہ دیں، کیونکہ یہ بھی  جراثیم کو اسکین میں داخل ہونے کی دعوت دے سکتے ہیں۔

ریزر (بلیڈ) نہ بدلنا

شیونگ میں بار بار ایک ہی یا پرانا ریزر استعمال کرنا بھی صحیح نہیں ہے۔ پرانے ریزر سے ایک ہی جگہ پر کئی بار شیو کرنی پڑتی ہے جس سے کہ کٹ لگنے ، ریشس ، جلن اور انفیکشن کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ پانچ سے سات بار شیو کرنے کے بعد ریزر پھینک دینا چاہیئے۔ اگر آپ کو ایک ہی جگہ پر بار بار ریزر چلانا پڑ رہا ہے تو اسکا مطلب ہے کہ اب آپ کو اسے پھینک کر نیا ریزر لے لینا چاہیئے۔