Type to search

بین الاقوامی

ملائیشیا کے وزیر اعظم مہاتیر محمد نے استعفیٰ

کوالالمپور، 24فروری(اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) ملائیشیا کے وزیراعظم مہاتیر محمد نے پیر کو اپنا استعفی ملک کے بادشہ کو سونپ دیا- وزیراعظم دفتر (پی ایم او) نے یہ معلومات دی، دنیا کے سب سے عمر دراز رہنما 94 سالہ مہاتیر محمد نے انکے سیاسی حریفوں کی طرف سے حکومت گرانے اور وزیراعظم بننے جارہے انور ابراہیم کو عہدے پر سنبھالنے سے روکنے کی کوششوں کے بعد یہ فیصلہ لیا-
اس چونکانے والے قدم سے پہلے 24 گھنٹے تک سیاسی ڈرامہ چلا جس میں انور کے خود کے پکیٹ آف ہوپ، ماتحاد کے حریف اور اپوزیشن رہنما نئی حکومت بنانے کی کوشش کرتے نظر آئے، اس اتحاد کو 2018 میں انتخابات میں تاریخی جیت ملی تھی-
ملائیشیا کے وزیر اعظم آفس کے مطابق مسٹر محمد نے مقامی وقت کے مطابق دن ایک بجے اپنا استعفیٰ شاہی محل میں جمع کر وایا تھا۔
مہاتیر محمد اور انور ابراہیم نے مئی 2018 کے انتخابات میں اتحاد کے ساتھ الیکشن لڑا اور ملک میں 60 سال سے برسرار اقتدار جماعت کا خاتمہ کردیا تاہم مہاتیر محمد اور انور ابراہیم کے درمیان کشیدگی میں گزشتہ ماہ بڑھی جب ملائیشین وزیراعظم نے طے شدہ وقت میں اختیارات انور ابراہیم کو سونپنے سے انکار کردیا۔

یاد رہے کہ 94 سالہ مہاتیر محمد اور ان کی اتحادی جماعت نے مئی 2018 میں حریف جماعت بریسن نیشنل (بی این) اور اس کے اتحادیوں کے 60 سالہ دور اقتدار کا خاتمہ کر کے پارلیمنٹ میں واضح اکثریت حاصل کی تھی۔
مسٹر محمد مئی 2018 میں ‘پكاٹن ہراپن’ یا ‘الائنس آف ہوپ’ اتحاد کے جیتنے کے بعد ملائیشیا کے وزیر اعظم بنے تھے۔ وہ پارتي پری بومی بیرساتو ملیشیا (پي پي بي ایم ) پارٹی کے چیئرمین بھی ہیں۔ یہ ‘پكاٹن ہراپن’ اتحاد کے چار اہم جماعتوں میں سے ایک ہے۔