Type to search

صحت

گردے کی پتھری کو باہر نکالنے کے چند گھریلو علاج

گردے کی پتھری

ہیلتھ ڈسک، (اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) گردے کی پتھری (کڈنی اسٹون) کا مسئلہ ہونے پر ناقابل برداشت درد ہوتا ہے۔اور درد سے راحت کے لیے لوگ کئی علاج کراتے ہیں ایسے میں گھریلو علاج کارآمد ہوسکتا ہے۔

 

دور حاضر میں لوگ وقت پر کھانا اور وقت پر سونا، پانی کم پینا، دیر رات کا جاگنا، ان سب کی وجہ سے انسان بیماریوں سے قریب ہوتا جارہا ہے۔

 

گردے جسم میں پانی، کیمیکل اور منرل کے سطح کو بہترین بنائے رکھنے کا کام کرتی ہے۔

گردے جسم سے ٹاکسن کو باہر نکالنے کے لیے ذمہ دار ہوتی ہے۔

کڈنی اسٹون کے درد سے راحت پانے اور کڈنی اسٹون کو باہر نکالنے میں کچھ گھریلو علاج کارگر ثابت ہوسکتے ہیں۔

گردے کی پتھری کے گھریلو علاج میں کچھ چیزوں کا استعمال کرنے کی صلاح دی جاتی ہے۔

غلط کھانے کی عادتوں کی وجہ سے گردے کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔

اور گردے سے جڑے مسائل ہونے لگتے ہیں۔ گردے (کڈنی اسٹون) سے راحت پانے کے طریقے کئی ہیں۔

لیکن قدرتی  طریقے سے کڈنی اسٹون میں راحت پانے سے بہتر کیا ہوسکتا ہے۔

گردے کی پتھری کی وجہ کئی ہوسکتے ہیں۔ کئی لوگوں میں پتھری کے شروعاتی علامات نظر آجاتے ہیں۔

جسکی وجہ سے وہ درد سے بچ جاتے ہیں اور وقت رہتے پتھری کا علاج کرا لیتے ہیں۔

اگر آپ کچھ قدرتی چیزوں کا روزآنہ استعمال کرتے ہیں تو آپ کو کڈنی اسٹون کے ناقابل درد سے نجات پانے اور کڈنی اسٹون کو باہر نکالنے میں مدد مل سکتی ہے۔

یہاں ایسی ہی چند قدرتی چیزوں کے بارے میں جو کڈنی اسٹون میں کافی فائدے مند ہوسکتی ہے۔

 

گردے کی پتھری کے مسئلہ کے لیے کار آمد ہیں چند چیزیں

انار

جیسا کہ آپ جانتے ہیں انار قدرت کا انمول تحفہ ہے۔

اور اس کے کئی سارے فائدے ہیں۔ انار میں اینٹی آکسیڈینٹ خصوصیات بھی ہوتے ہیں۔

کئی اور پریشانیوں کو دور رکھنے کا کام کرتے ہیں۔

اگر آپ کڈنی اسٹون سے پریشانی ہیں تو انار کا استعمال آپ کے لیے فائدے مند ہوسکتا ہے۔

انار کا استعمال کرکے کئی پریشانیوں کو دور کیا جاسکتا ہے۔

انار جسم میں خون کی کمی کو دور کرنے کے لیے جانا جاتا ہے لیکن اسکا استعمال کرکے گردے کی پتھری کے مسئلے سے بھی راحت مل سکتی ہے۔

 

کڈنی اسٹون میں  آملہ ۔ آنولا کا استعمال

آنولا کا آیورویک اور یونانی کافی استعمال ہوتا ہے۔ اس کے بے شمار فائدے ہیں۔

اس سے نہ صرف کڈنی کے کام کرنے کی صلاحیت بڑھ سکتی ہے بلکہ کڈنی اسٹون کے درد سے اور اسے باہر نکالنے میں بھی مدد مل سکتی ہے۔

آنولا میں وٹامن سی بھرپور مقدار میں ہوتا ہے۔

آنولا کا استعمال کر کے گردے کی پتھری کے مسئلے سے راحت پائی جاسکتی ہے۔

کڈنی اسٹون کا مسئلہ دور کرنے کے لیے آنولا کا پاؤڈر بنا کر اسکا استعمال کرنا چاہیئے۔

 

زیتون کا تیل اور نیمبو کا رس

زیتون کے بارے میں آپ نے سنا ہی ہوگا۔

زیتون کا پھل اور تیل دونوں کی کافی کارآمد ہے۔

زیتون کا تیل یونانی اور آیوروید میں بھی استعمال ہوتا ہے۔

اور یہ آسانی سے دوکانوں پر مل جاتا ہے۔

کڈنی میں اسٹون کے مسئلے کو دور کرنے کے لیے نیمبو کے رس میں زیتون کا تیل ملا کر استعمال کرنا چاہیئے۔

گردے میں پتھری ہونے پر نیمبو اور زیتون کے تیل کو کافی فائدے مند مانا جاتا ہے۔

اس ڈرنگ کا روزآنہ استعمال کرنے سے کڈنی اسٹون کے مسئلہ سے چھٹکارا مل سکتا ہے۔

یہ دونوں نہ صرف کڈنی کے درد سے راحت دلا سکتے ہیں بلکہ کڈنی اسٹون نکالنے میں بھی فائدے مند ہوسکتے ہیں۔

پتھری ہونے خوب پانی پیئیں

اکثر لوگ کام میں مصروف ہونے کی وجہ پانی پینا بھول جاتے ہیں۔ اور کئی بیماریوں کے شکار ہوجاتے ہیں۔

ذیادہ پانی پینے سے پتھری کا مسئلہ ٹھیک ہوسکتا ہے، ساتھ ہی پتھری کو باہر نکالنے میں بھی مدد مل سکتی ہے۔

گردے کی پتھری کو پیشاب کے ذریعہ باہر نکالنے کے لیے آپ کو خوب پانی پینے کی ضرورت ہوتی ہے۔

حالانکہ پتھری کے سائز پر منحصر کرتا ہے کہ یہ پیشاب کے ذریعہ باہر نکل سکتا ہے یا نہیں، پانی کا ذیادہ استعمال،

کرنے سے پیشاب کے ذریعہ جسم سے بیکار ٹاکسن اور فاضل مادہ باہر نکل جاتے ہیں

 

سیب کا سرکہ پتھری ہونے 

سیب کا سرکہ ٹاکسن کو باہر نکالنے میں بھی مددگار ہوسکتا ہے۔

لیکن سیب کے سرکہ کی مقدار کا خیال ضرور رکھیں۔ اسے ہر دن دو چمچ سے ذیادہ نہ لیں۔

پانی میں ملا کر اسکا استعمال کیا جاسکتا ہے۔

سیب کا سرکہ کڈنی اسٹون سے راحت دلانے میں کارآمد ثابت ہوسکتا ہے۔

سیب میں کافی مقدار میں سائٹرک ایسڈ پایا جاتا ہے جو کڈنی اسٹون کو چھوٹے چھوٹے ذرات میں توڑنے کا کام کرتا ہے۔


(نوٹ: صلاح سمیت یہ مضمون صرف عام معلومات فراہم کرتی ہے۔ یہ کسی بھی طرح سے طبی رائے کا متبادل نہیں ہے، مزید معلومات کے لئے ہمیشہ کسی ماہر یا اپنے ڈاکٹر سے رجوع کریں۔ اردو پوسٹ اس معلومات کے لیے ذمہ داری قبول نہیں کرتا ہے۔ )