Type to search

قومی

وزیر اعظم نریندر مودی کے دعوے کے برخلاف ، کرناٹک میں کھلا پہلا ڈیٹینشن سنٹر

بنگلور،25ڈسمبر(اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) دہلی کے رام لیلا میدان میں وزیراعظم نریندر مودی نے این آر سی کے مدنظر کسی بھی طرح کے ڈیٹینشن سنٹر (حراستی سنٹر) بنائے جانے سے انکار کیا تھا۔ اس درمیان کرناٹک کے نیلمنگلا میں غیر قانونی رہائشیوں کے لیے پہلے ڈیٹینشن سنٹر کا افتتاح کیا گیا۔ محکمہ سوشل ویلفیئر کے کشمنر آر ایس پیڈپائیہ نے بتایا کہ یہ ڈیٹینشن سنٹر غیر قانونی تارکین کے لیے پوری طرح سے تیار ہے۔

ریاستی حکومت کی اسے جنوری میں ہی کھولنے کا منصوبہ تھا لیکن مرکزی حکومت کے ہدایت کے بعد انہوں نے اسے ٹال دیا۔ پیڈپائیہ نے بتایا کہ غیر ملکی علاقائی رجسٹریشن آفس ریاست میں غیر قانونی شہریوں کی پہچان کرئے گا اور پھر انہیں ڈیٹیشن سنٹر بھیجا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ ہم انہیں (غیر قانونی تارکین کو) سبھی تمام بنیادی ضرورتوں کے ساتھ پناہ دینے کو تیار ہے۔

غور طلب ہے کہ کرناٹک حکومت نے ایک حکومتی محکمہ سوشل ویلفیئر کے ہاسٹل کو ڈیٹیشن سنٹر میں تبدیل کردیا ہے۔ اس میں 6 کمرے ، ایک کچن اور سیکیورٹی رومس ہے اور اس میں 24 لوگوں کے رہنے کی سہولت ہے۔ سنٹر کے کیمپس میں ایک واچ ٹاور بھی بنایا گیا ہے اور کمپاؤنڈ کی دیواروں کو کانٹے دار تاروں سے محفوظ کیا گیا ہے۔ بتادیں کہ نومبر میں ریاستی حکومت نے کرناٹک ہائی کورٹ کو اس بات کی اطلاع دی تھی کہ انہوں نے ریاست کے کئی ضلعوں میں غیر قانونی تارکین کے لیے 35 عارضی ڈینشن سنٹر تیار کیے ہیں۔

اسکے علاوہ حکومت نے بتایا تھا کہ ریاست میں غیر ملکی ایکٹ کے تحت کئی ملکوں کے شہریوں کے خلاف 612 معاملے درج کیے ہیں۔ اسکے علاوہ دیگر دفعات میں غیر قانونی تارکین پر 866 مقدمے درج ہے۔
یہ خبر ٹائمز نیوز نیٹ ورک سے لی گئی ہے۔ جو نوبھارت ٹائمز میں شائع کی گئی ہے۔

Tags:

You Might also Like