Type to search

اسپورٹس

ملائیشیا انٹرنیشنل کراٹے چمپئن شپ میں حسین کا زبردست حیرت انگیز مظاہرہ

ملائیشیا انٹرنیشنل کراٹے

حیدرآباد، یکم جولائی (اردو پوسٹ) تلنگانہ سے تعلق رکھنے والے سید محمد حسین 6ویں لیجنڈ ملائیشیا انٹرنیشنل کراٹے چمپئن شپ میں فاتح کے طور پر ابھرے، انہوں نے کومیٹ ایونٹ-ایلایٹ میں 16-21 اور -55 کلوگرام وزن کے زمرے میں مقابلہ کیا۔

 

 

 

یہ اہم واقعہ 29 سے 30 جون، 2019 تک پھیلے ہوئے گرینڈ اسٹیڈیم ایم پی ایس جے سرڈنگ جیا سیلنگور ، ملائیشیا میں سامنے آیا، جہاں حسین کی مہارت نے ملائیشیا اوپن کراٹے چیمپئن کے طور پر ان کی حیثیت کو مستحکم کیا۔

 

 

 

بین الاقوامی مقابلوں میں حسین کا غیر معمولی ٹریک ریکارڈ ان کی غیر معمولی صلاحیتوں کا اظہار کرتا ہے، انہوں نے ہندوستان کے بہترین جنگجوؤں میں سے ایک کے طور پر قائم کیا۔

 

تکنیکی مہارت اور کورٹ کوریج کا مظاہرہ کرتے ہوئے، حسین نے اپنے چست حریف کو حکمت عملی کے ساتھ پیچھے چھوڑتے ہوئے اعلیٰ کارکردگی کا مظاہرہ کیا۔

 

 

 

ابتدائی دور میں حسین کے غلبے کا مشاہدہ کیا گیا، کیونکہ انہوں نے بہت زیادہ حملے کیے جو ان کے مخالفوں سے کہیں زیادہ تھے۔

 

جبکہ دوسرا راؤنڈ زیادہ سخت مقابلہ ثابت ہوا، حسین کے حریف نے 3-2 سے کامیابی حاصل کی۔ پھر بھی، بے خوف، حسین نے فائنل راؤنڈ میں شک کی کوئی گنجائش نہیں رکھی۔

 

 

اپنے حق میں 5-0 کے زبردست فیصلے کے ساتھ، انہوں نے اپنی اچھی طرح سے مستحق فتح حاصل کی۔

 

 

ایک تاریخی کارنامے میں، حسین ملائیشیا اوپن چیمپئن شپ میں طلائی تمغہ حاصل کرنے والے پانچویں ہندوستانی مرد کھلاڑی بن گئے، جو ریکارڈ چھ بار کے چیمپئن کی صف میں شامل ہوئے۔

 

 

اس کامیابی نے اس کھیل میں اپنے آغاز کے بعد سے کراٹے میں ہندوستان کا پہلا طلائی تمغہ بھی حاصل کیا۔ شروع سے ہی، حسین نے اپنے تسلط پر زور دیا، عین مطابق اور زبردست حملے کرتے ہوئے، ابتدائی تین منٹوں میں تیزی سے برتری حاصل کر لی۔

 

ان کے حریف، جو اس سے پہلے تین بار عالمی چیمپئن شپ میں تمغہ جیت چکے تھے۔

کلائمٹک راؤنڈ میں، حسین نے حملوں کی ایک بے لگام بیراج کو آگے بڑھایا، بالآخر اس انداز میں گولڈ تمغہ جیت لیا اور مہارت کا مظاہرہ کیا۔

 

 

بین الاقوامی سطح کا تمغہ حاصل کرنا ایک خواب کی تعبیر ہے، اور حسین کے لیے اسے ابتدائی مرحلے میں پورا کرنا قابل ستائش سے کم نہیں۔

 

ہم، ہندوستان میں، اپنے چمپئن پر فخر کرتے ہیں، جو نہ صرف ہمیں فخر سے بھر دیتا ہے بلکہ آنے والی نسلوں کے لیے بھی ایک تحریک کا کام کرتا ہے۔

Tags:
Ayub Khan

Ayub Khan, MA (MCJ) MANUU, Managing Editor of Urdu Post, CEO of MAKS Media.

  • 1

You Might also Like