Type to search

ٹی وی اور فلم

ہندی اور پنجابی فلموں کے اداکار منگل ڈھلون انتقال کر گئے

منگل ڈھلون

فلمی ڈسک، 11 جون (اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) ہندی اور پنجابی فلموں کے ایکٹر منگل ڈھلون کا آج صبح اس دنیا کو الوداع کہا۔ وہ پچھلے کچھ سالوں سے کینسر سے متاثر تھے۔

 

منگل ڈھلون پنجاب کے لدھیانہ شہر کے ہاسپٹل میں علاج چل رہا تھا۔ پچھلے کچھ وقت سے انکی طبعیت کافی خراب تھی اور آج یعنی 11 جون 2013 بروز اتوار کی صبح ایکٹر نے آخری سانس لی۔

 

منگل پنجابی فلم انڈسٹری کا ایک مشہور نام تھا۔ اس کے علاوہ انہوں نے کئی بالی ووڈ فلموں اور ٹی وی سیریلز میں بھی اپنی اداکاری سے لوگوں کے دل جیتے تھے۔ وہ سال 1988 میں آئی اداکارہ ریکھا اور کبیر بیدی کی فلم خون بھری مانگ میں ایک مختصر کردار میں نظر آئے۔ اس کے بعد وہ تفریح ​​کی دنیا میں ایکٹیو رہے۔

 

وہیں ایکٹر یشپال شرما نے میڈیا سے بات چیت میں منگل ڈھلون کی موت کی تصدیق کی اور بتایا کہ وہ لمبے وقت سے کینسر سے متاثر تھے اور لدھیانہ کے کینسر ہاسپٹل میں علاج کرا رہے تھے۔

وہیں منگل ڈھلون کے انتقال سے پنجابی فلم انڈسٹری میں غم کی لہر دوڑ گئی۔ انکے فینس اور فلمی اسٹارس انکے انتقال پر اظہار افسوس ظاہر کیا۔

سال 1986 میں انکے ہاتھ دوردرشن کے ٹی وی سیریل کتھا ساگر لگا، مشہور ٹی وی شو بنیاد نے انہیں گھر گھر پہنچان دلائی۔

 

 

اداکار ہونے کے ساتھ ساتھ ایک مصنف اور فلم ڈائریکٹر بھے تھے۔ اپنے ایکٹینگ کیریئر کی شروعات ڈراموں سے کی۔

انہوں نے دہلی اور چندی گڑھ کے تھیٹر میں کیا اور پھر فلموں اور سیریلس کی دنیا میں قدم رکھا۔

منگل نے کئی ساری فلموں کے ساتھ کئی مشہور ٹی وی سیریلس میں منفی کردار نبھائے۔

 

بتا دیں کہ منگل ڈھلوں نے خون بھری مانگ، زخمی عورت، دیوان، بھرشٹاچار، اکیلا، وشواتما، امبا، اکیلا، زندگی ایک جوا، دلال، صاحبان جیسی کئی فلموں میں کام کیا اور اپنی ایک الگ پہچان بنائی۔

 

 

 

منگل سنگھ ڈھلون کی پیدائش فریدکوٹ میں 1974 میں ایک پنجابی گھرانے میں ہوئی تھی، انکی اہلیہ کانام ریتو ڈھلون ہے،

انہوں نے وہی ںسے پڑھائی کی اور اسکے بعد وہ خاندان کے ساتھ اترپردیش آگئے۔ یہاں سے وہ پھر پنجاب آگئے تھے اور وہیں سے گریجویشن کیا۔