Type to search

صحت

مرچ کھانا ہے فائدے مند، ہارٹ اٹیک سے موت کا خطرہ 40 فیصدی کم

ہیلتھ ڈسک،(اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) اگر آپ مرچ کھانا پسند نہیں کرتے تو اپنی یہ عادت بدل دے۔ لائف کے ساتھ ساتھ ڈائٹ میں بھی کچھ سپائس یعنی تیکھاپن اور مرچ ایڈ کرنا آپ کے لیے فائدے مند ثابت ہوسکتا ہے۔ ایک نئی ریسرچ کی مانیں تو مرچ کا تیکھا اور کسیلا مزہ ہارٹ اٹیک، اسٹروک اور کئی دوسری دل سے جوڑی بیماریوں سے ہونے والی موت کے خطرے کو کافی کم کرسکتا ہے۔ جنرل آف کارڈیولوجی میں یہ اسٹیڈی شائع ہوئی ہے۔

23ہزار لوگوں پر کی گئی اس اسٹیڈی میں تحقیق کاروں نے پایا کہ  باقاعدہ  طور سے اگر مرچ کا استعمال کیا جائے تو اسٹروک کا خطرہ 61فیصدی، ہارٹ اٹیک کا خطرہ 40 فیصد اور اسکیمک دل کی بیماری سے موت کا خطرہ 44 فیصد ک کم ہوجاتا ہے۔ آخری مرچ اتنی طاقتور کیوں ہے؟ چلی پیپرس یعنی مرچ میں کیپسائسن نام کا کیمیکل پایا جاتا ہے۔ جو جسم میں سوجن اور جلن کو کم کرنے میں مدد کرتا ہے۔

آپکی ڈائٹ کیسی ہے اس بات سے کوئی فرق نہیں پڑتا

اس اسٹیڈی کے مصنف ڈاکٹر ماریا لورا بوناسیو کی مانیں تو لوگوں کی ڈائٹ کیسی ہے، صحت مند ہے یا نہیں اس بات سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔ صرف مرچ کو ڈائٹ میں شامل کرنے سے موت کا خطرہ اپنے آپ کم ہوجاتا ہے۔ دوسرے الفاظوں میں کہے تو کوئی شخص کم صحت مند ڈائٹ کا استعمال کرتا ہے ۔۔۔ دونوں ہی لوگ اگر مرچ کا استعمال کریں تو ان میں دل کی بیماریوں سے موت کا خطرہ کم ہوجائے گا۔

مرچ کے استعمال سے کینسر۔ذیبطیس کا خطرہ بھی کم

اسٹیڈی کے نتائج میں یہ بات سامنے آئی کہ جن لوگوں نے ہفتے میں چار بار مرچ کا استعمال کیا ان میں دل کی بیماری سے موت کا خطرہ ان لوگوں کےمقابلے میں کافی کم ہوگیا جنہوں نے مرچ کا استعمال بالکل نہیں کیا۔ کچھ اسٹیڈیز میں یہ بات بھی سامنے آچکی ہے کہ چلی پیپر کا استعمال کرنے سے کینسر اور ذیابطیس کا خطرہ بھی کافی کم ہوجاتا ہے۔ ایسا اس لیے ہوتا ہے کیونکہ مرچ آخر میں موجودہ گٹ بیکٹیریا کو بڑھاوا دیتی ہے اور موٹاپے کو کنٹرول کرنے میں مدد کرتی ہے۔

Tags: