Type to search

تعلیم اور ملازمت

پروفیسر گوپی چند نارنگ کے انتقال سے اردو تنقید کے زرین دور کا خاتمہ

شعبہ اردو یونیورسٹی آف حیدرآباد میں تعزیتی اجلاس سے مختلف اساتذہ کا اظہار تعزیت


حیدرآباد27 جون: شعبہ اردو یونیورسٹی آف حیدرآباد کی جانب سے گزشتہ روز اردو کے ممتاز دانشور اور صفِ اول کے نقاد پروفیسر گوپی چند نارنگ کے سانحہ ارتحال پر ایک آن لائن تعزیتی اجلاس کا انعقادعمل میں آیا۔ اس تعزیتی اجلاس میں شعبہ اردو کے طلبا وطالبات و اساتذہ کے علاوہ ملک کی مختلف جامعات کے اساتذہ اور ریسرچ اسکالرز نے شرکت کی۔

پروفیسر سید فضل اللہ مکرم، صدر شعبہ اردو نے ابتدا میں کہا کہ شعبہ اردو یونیورسٹی آف حیدرآباد کو یہ اعزاز حاصل ہے کہ پروفیسر گوپی چند نارنگ نے اس شعبہ میں دو برس بحیثیت گیسٹ پروفیسر اپنی خدمات انجام دیں اور وہ ہمیشہ شعبہ اردو کی سرپرستی فرماتے رہے۔ انہوں نے آنجہانی پروفیسر کی علمی و ادبی خدمات پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ ان کے انتقال سے اردو دنیا میں جو خلا پیدا ہوا ہے اسے پُر کرنا مشکل ہے۔

پروفیسر حبیب نثار، شعبہ اردو یونیورسٹی آف حیدرآباد نے پروفیسر گوپی چند نارنگ کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ آنجہانی پروفیسر کا حیدرآباد اور یونیورسٹی آف حیدرآباد سے کافی گہرا تعلق تھا۔ وہ ایک بڑے عالم و فاضل شخصیت تھے جنہوں نے جدیدیت اور ما بعد جدیدیت پر بہت کچھ لکھا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ گوپی چند نارنگ ایک بڑا نام ہے جنہیں بھلایا نہیں جا سکتا۔ انہیں صرف ہندوستان ہی میں نہیں بلکہ دوسرے ممالک سے بھی انعام و اکرام سے نوازا جا چکا ہے۔ یورپ میں اردو کے حوالے سے ان کا ایک اچھا نام ہے اور انگریزی میں بھی اردو سے متعلق ان کی کتابیں آئی ہیں۔

ڈاکٹرزاہد الحق، اسوسی ایٹ پروفیسر، شعبہ اردو یونیورسٹی آف حیدرآباد نے کہا کہ پروفیسر گوپی چند نارنگ کی علمی و ادبی خدمات کا اعتراف ہر کسی نے کیا ہے اور ہم سب اردو والوں کے لیے ان کا سانحہ ارتحال دکھ کی بات ہے۔ انہوں نے کہا کہ اردو ادب پر واقعی یہ بڑا برا وقت آن پڑا ہے کیوں کہ ہمارے درمیان سے سارے روشن چراغ دھیرے دھیرے گل ہوتے جا رہے ہیں۔

ڈاکٹرمحمد کاشف، اسسٹنٹ پروفیسر، شعبہ اردو یونیورسٹی آف حیدرآباد نے کہا کہ گوپی چند نارنگ کے انتقال پُرملال نے اردو دنیا کو سوگوار کر دیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آنجہانی پروفیسر اپنے آپ میں ایک انجمن تھے ان کی شخصیت تحریک کی حیثیت رکھتی تھی۔ جدیدت اور مابعد جدیدت کے حوالے سے انہوں نے جو کچھ لکھا اور جس طرح واضح کرنے کے بعد اس تحریک کو مستحکم کیا وہ کسی اور نے نہیں کیا۔ ڈاکٹر محمد کاشف نے کہا کہ انہوں نے کبھی بھی آنجہانی پروفیسر کو کسی کی مخالفت کرتے ہوئے یا کسی کے خلاف بولتے نہیں دیکھا۔ ان کے انتقال سے جو خلا پیدا ہوا ہے واقعی اس کا پُر ہونا آج کے زمانے میں مشکل ہے کیوں کہ آج ایسے لوگ اردو ادب میں کم ہوتے جارہے ہیں جن کواردو کے ساتھ انگریزی ادب پر بھی عبور حاصل ہو۔

پروفیسر شہزاد انجم، شعبہ اردو جامعہ ملیہ اسلامیہ نے کہا کہ شمس الرحمن فاروقی اور شمیم حنفی کے بعد اب پروفیسر گوپی چند کے چلے جانے سے اردو دنیا ایک زرین دور کے خاتمے سے دوچار ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ آنجہانی پروفیسر کی بلوچستان میں پیدائش ہوئی تھی، مادری زبان سرائیکی تھی لیکن جس طرح اردو کو اپنا اوڑھنا بچھونا بنایا وہ قابل تعریف ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پروفیسر گوپی چند نارنگ سے میرا تعلق کافی پرانا ہے، وہ جب دہلی یونیورسٹی میں بحیثیت استاد اپنی خدمات انجام دے رہے تھے میں وہاں ایک طالب علم تھا۔

جموں و کشمیر سے تعلق رکھنے والے افسانہ نگارو نقاد ڈاکٹر مشتاق احمد وانی نے کہا کہ پروفیسر گوپی چند نارنگ نے ادب کو نئے نئے علمی باب اور نئی جہات سے روشناس کرایا ہے۔ انہوں نے کہا کہ آنجہانی پروفیسر صاحب تو براہ راست میرے استاد نہیں رہے لیکن میں ان کو اپنا مربی مانتا رہا ہوں اور ان کے مفید مشوروں سے ہی میں نے کاغذاور قلم سے اپنا رشتہ استوار کیا ہے۔

ڈاکٹر محبوب حسن، شعبہ اردوگورکھپور یونیورسٹی نے کہا کہ پروفیسر گوپی چند نارنگ کا اس دنیا سے رخصت ہونا ہم سبھی کے لیے رنج کا مقام ہے۔ انہوں نے کہا کہ آنجہانی پروفیسر نے اردو ادب میں جو خدمات انجام دی ہیں وہ ہم سب کے لیے مشعل راہ کی حیثیت رکھتی ہیں۔

آن لائن تعزیتی اجلاس میں پروفیسر نسیم الدین فریس، پروفیسر سجاد حسین، پروفیسر شوکت حیات، پروفیسر انورالدین وغیرہ نے مصروفیت کی وجہ سے شرکت نہیں کی مگر اپنے گہرے دکھ کا اظہار کرتے ہوئے آنجہانی پروفیسر گوپی چند نارنگ کو خراج عقیدت پیش کیا۔ شعبہ اردو یونیورسٹی آف حیدرآباد کے ریسرچ اسکالروں میں سے اطیع اللہ نے اپنے تاثرات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آنجہانی پروفیسر کی کئی دہائیوں پر محیط خدمات کو کبھی فراموش نہیں کیا جاسکتا ہے۔

آخر میں صدر شعبہ پروفیسر سید فضل اللہ مکرم نے تعزیتی اجلاس میں پروفیسر گوپی چند نارنگ کے افراد خاندان، ان کے شاگردوں اور ان کے چاہنے والوں سے اظہار تعزیت کیا اور کہا کہ شعبہ اردو کے طلبا و اساتذہ آپ کے غم میں برابر کے شریک ہیں اور دعا گو ہیں کہ اللہ ان کی آتما کوشانتی دے۔

(رپورٹ: رشدہ شاہین، ریسرچ اسکالر)