Type to search

بین الاقوامی

آسٹریا کے ایم ایم اے فائٹر ہیلم اوٹ نے قبول کیا اسلام

ہیلم اوٹ

ویانا،21اپریل (اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) آسٹریا مکسڈ مارشل آرٹس (ایم ایم اے) فائٹر ہیلم اوٹ نے اعلان کرتے ہوئے کہا کہ وہ کوویڈ 19 کے بحران نے انکو اپنا ایمان ڈھونڈنے میں مدد فراہم کی۔ انہوں نے 16 اپریل کو اسلام قبول کیا۔انہوں نے انسٹاگرام پر ایک پوسٹ میں کہا کہ اسلام کئی برسوں سے ان کے ذہن میں تھا۔

 

اوٹ نے کہا ، میرا ایمان اب اتنا مضبوط ہوچکا ہے کہ میں واحد حقیقی خدا کو پہچان سکتا ہوں۔ اور اب فخر سے کہوں گا ، ہاں میں ایک مسلمان ہوں،”

مکسڈ مارشل آرٹس کے 37 سالہ ہیلم اوٹ نے پوسٹ کے ذریعہ اعلان کرتے ہوئے کلمہ شہادت پڑھ کر مسلمان ہوگئے ہیں۔ کورونا وائرس نے مجھے اتنا وقت مہیا کرایا کہ میں اپنے ایمان کو کو ڈھونڈ سکوں، میرا ایمان اب اتنا مضبوط ہے کہ میں ایک اللہ کو جان کر اور کلمہ شہادت پڑھ کر فخریہ طور پر یہ کہہ سکتا ہوں کہ اب میں مسلمان ہوں۔

اوٹ نے بتایا کہ وہ کئی سالوں سے اسلام پر تحقیق کررہے تھے۔ اور اس معاملے میں مداحوں کی جانب سے مکمل سپورٹ کرنے پر ان سے اظہار تشکر کیا۔ اس موقع پر انہوں نے ترکی سے تعلق رکھنے والے ساتھی ایم ایم اے فائٹر براق کزلرمک کا شکریہ ادا کیا۔

جنہوں نے انہیں قرآن مجید اور جائے نماز کا تحفہ دیا تھا۔ دی امیزنگ کےنام سے مشہور عظیم آسٹرین فائٹر 1982 میں پیدا ہوئے اور وہ اس وقت 615 ایکٹوریسلرز کی رینکنگ میں 74ویں نمبر پر ہیں۔

اوٹ ، سن 2008 سے پیشہ ورانہ انداز میں باکسنگ کر رہے ہیں، اوٹ نے “پوری مسلم کمیونٹی” کا پرتپاک خیرمقدم کرنے پر شکریہ ادا کیا اور اس بات کی تصدیق کی کہ وہ اب پہلی بار رمضان کے مقدس ماہ رمضان کی تیاری کر رہے ہیں۔