Type to search

وائرل

بھوکی حاملہ ہاتھی پٹاخے سے بھرا انناس کھانے سے ہوئی موت

وائرل ڈسک،3جون(اردو پوسٹ انڈیا ڈاٹ کام) کیرلا میں ایک حاملہ ہاتھی کے ساتھ حیوانیت کی ایک عجیب غریب واقع سامنے آیا- لوگوں نے اسے پٹاخوں سے بھرا انناس کھلا دیا- پٹاخے ہاتھی کے منہ میں پھٹ گئے اور اسکی موت ہوگئی-

شمالی کیرلا کے ملاپورم ضلع میں ایک فاریسٹ اہلکار کی طرف سے سوشل میڈیا پر ہاتھی کی بھیانک موت کی تفیصلات سنائے جانے کے بعد یہ واقع سامنے آیا- خبر کو پڑھتے ہوئے بالی ووڈ اداکارہ انوشکا شرما غصہ ہوئی-
انہوں نے اپنے انسٹاگرام اسٹوری میں لکھا، اس لیے ہمیں جانوروں کے ظلم کے خلاف سخت قانون کی ضرورت ہے- پھر انہوں نے جذباتی کر دینے والا کارٹون شیئر کیا اور مجرموں کو سزا دینے کی اپیل کی-

 

View this post on Instagram

 

#Repost @tedthestoner . We all would urge @cmokerala to find the perpetrators and bring them to justice for this heinous crime. • A pregnant elephant was fed cracker stuffed pineapple by unidentified people in Kerala which exploded in her mouth and damaged her jaw. She walked around the village and finally passed away standing in a river. We keep searching for monsters hoping they would be having the devil’s horns on their heads. But look around you, the monsters walk beside you. This elephant was going to give birth 18-20 months later. Even after the elephant was injured, she did not crush a single home or hurt a single human being. She just stood in a river because of the excruciating pain and passed away without hurting a single soul. From anybody who throws stones at a stray dog to anybody hurting a living soul, choose one face. A lot of these animals trust human beings because they have been helped by them in the past. This is cruel beyond measure. When you lack empathy and kindness, you do not deserve to be called a human being. To hurt someone is not human. Just stricter laws won’t help. We need a decent execution of the law too. Until the guilty are punished in the worst possible way, these wicked monsters will never fear the law. Though it’s a difficult task, I hope they are able to find out the one who committed this crime and punish them accordingly. Artwork by Bratuti.

A post shared by ɐɯɹɐɥS ɐʞɥsnu∀ (@anushkasharma) on

کیرالا کے مذکورہ فارسٹ محکمے کے ذمہ داران ان لوگوں کی ”تلاش“ کررہے ہیں جو ایک 15سالہ حاملہ ہاتھی کی موت کے ذمہ دار ہیں۔ بتادیں کہ ہاتھی دو ماہ کی حاملہ تھی- اسے پوسٹ مارٹم کے فوری بعد جنگل میں ہاتھی کو دفن کردیاگیاہے۔

انناس کے پٹاخے اتنے خطرناک تھے کہ اسکی زبان اور منہ بری طرح سے زخمی ہوگئے- ہاتھی شدید بھوک کی وجہ سے اپنی گھومتی رہی اور اپنی چوٹ کی وجہ سے وہ کچھ کھا بھی نہیں پا رہی تھی-

حکام کی کئی گھنٹوں کی کوششوں کے بعد بھی وہ باہر نہیں آئیں اور وہ 27 مئی کی شام 4 بجے پانی میں کھڑی ہو کر دم توڑ گئیں۔

Tags:

You Might also Like