Type to search

تلنگانہ

وزیر اعلی تلنگانہ انومولا ریونت ریڈی نے لیا حلف

انومولا ریونت ریڈی

حیدر آباد ۔ 7 دسمبر (یو این آئی) ریاست تلنگانہ کے دوسرے وزیر اعلی کے طور پر آج دو پہر ٹھیک ایک بجکر 4 منٹ پر انومولا ریونت ریڈی نے شہر حیدرآباد کے ایل بی اسٹیڈیم میں منعقدہ عظیم عظیم الشان تقریب میں حلف لیا۔

 

بتادیں کہ تلنگانہ میں 119 سیٹوں کے لیے 30 نومبر کو ہوئے انتخابات کے نتائج 3 ڈسمبر 2023 کو جاری ہوئے تھے جس میں کانگریس 119 اسمبلی سیٹوں میں سے 64 نشستوں پر کامیابی حاصل کی۔ وہیں مجلس کی 7 نشستوں پر کامیاب ہوئی۔

 

 

 

گورنر ڈاکٹر تمیلی سائی سوندرا راجن نے انہیں عہدہ اور رازداری کا حلف دلایا۔ ان کے ساتھ وزرا ملوبھٹی وکرامارکا، اتم کمار ریڈی، کومٹ ریڈی وینکٹ ریڈی، سیتکا، کونڈا سر یکھا، سریدھر بابو، پی سرینواس ریڈی، ٹی ناگیشور راؤ، دامودر راج نرسمہا، سدرشن ریڈی، پونم پر بھا کرنے بھی حلف لیا۔ کانگریس کے سر کردہ لیڈران بشمول پارٹی کے صدر ملکارجن کھر گے ، سونیا گاندھی ، راہل گاندھی، پرینکا گاندھی ، وزیر اعلی کر ناٹک سدارامیا ، ان کے نائب ڈی کے شیو کمار ، کرناٹک کے کئی وزراء اور پارٹی لیڈر ان کے علاوہ دوسری ریاستوں کے پارٹی لیڈران نے بھی حلف برداری تقریب میں شرکت کی۔

 

 

 

 

 

 

ریونت ریڈی کو 6 انتخابی ضمانتوں کو پورا کرنے کا چیلنج

پہلی گیارنٹی- خواتین پر مبنی فلاحی پروگرام کے تحت خواتین کے لیے 2500 روپے ماہانہ، 500 روپے میں گیس سلنڈر اور پبلک ٹرانسپورٹ میں مفت سفر دیا جائے گا۔

دوسری گیارنٹی- کانگریس نے 10 لاکھ روپے کا ہیلتھ انشورنس فراہم کرنے کا وعدہ کیا ہے۔

تیسری گیارنٹی- گھر کے لیے جگہ اور گھر بنانے کے لیے 5 لاکھ روپے دیئے جائیں گے-

چوتھی گیارنٹی- گراہ جیوتی اسکیم کے تحت اہل گھروں کو 200 یونٹ مفت بجلی دی جائے گی۔

پانچویں گیارنٹی- یووا وکاسم اسکیم میں نوجوان طلباء کو  5 لاکھ روپے دیے جائیں گے۔

چھٹی گیارنٹی – بوڑھوں، بیواؤں، معذوروں، بیڑی مزدوروں، اکیلی خواتین، بنکروں، ایڈز اور فائلیریا کے مریضوں کے ساتھ ساتھ گردے کے مریضوں کے ساتھ ساتھ ڈائیلاسز کروانے والوں کو 4000 روپے کی پنشن ہر ماہ دی جائے گی۔

 

 

 

 

 

حلف برداری کی تقریب میں تلنگانہ کوریاست کا درجہ دلانے کیلئے اپنی جانوں کی قربانی دینے والے 300 افراد کے ارکان خاندان بھی شریک ہوئے۔

 

 

 

حلف برداری تقریب میں تقریبا ایک لاکھ 30 ہزار افراد شریک ہوئے۔ کانگریس کی مرکزی قیادت نے وسیع تر مشاورت کے بعد اس اہم ترین عہدہ کے لئے ریونت ریڈی کے نام کو قطعیت دی تھی۔ اس تقریب میں ریاست کے مختلف اضلاع سے کثیر تعداد میں پارٹی لیڈران اور کارکنوں نے بھی شرکت کی۔

 

 

 

انومولا ریونت ریڈی کا اب تک کا سیاسی سفر

کانگریس کے سابق قومی صدر راہل گاندھی کو بھارت جوڑو یاترا کے ذریعہ انتخاب لڑنے کی ترغیب دینے کا سہرا دینے والے ریونت ریڈی کی پیدائش محبوب نگر ضلع کے کونڈاریڈی پلی میں 8 نومبر 1969 کو ہوا-

 

 

 

 

طالب علمی کی زندگی میں اکھیل بھارتیہ ودیارتھی پریشد کے رکن بنے اور سال 2006 میں مقامی سیاست میں اترے، اور پہلی بار میں ہی آزاد حیثیت کے طور پر مڈجل منڈ سے زیڈ پی ٹی سی رکن منتخب ہوئے- اگلے سال یعنی 2007 میں وہ آزاد حیثیت سے ہی پہلی بار قانون ساز کونسل کے رکن منتخب ہوئے۔

 

 

 

عثمانیہ یونیورسٹی کے اے.وی کالج سے بیچلر آف آرٹس کی ڈگری پانے والے انومولا ریونٹ ریڈی بعد میں تیلگو دیشم پارٹی صدر این چندرا بابو نائیڈو سے ملاقات کے بعد شامل ہوگئے-

 

 

سال 2009 میں، انہوں نے پہلی بار اسمبلی انتخابات میں حصہ لیا، اور پانچ بار کانگریس کے ایم ایل اے گروناتھ ریڈی کو امیدوار کے طور پر شکست دی۔

 

 

 

اس کے بعد غیر منقسم آندھراپردیش سے تلنگانہ اسمبلی اسمبلی کے لیے سال 2014 میں انہوں نے ایک بار پھر کونڈنگل سیٹ سے ٹی ڈی پی امیدوار کے طور گروناتھ ریڈی کو شکست دی، اور اسکے بعد انہیں ٹی ڈی پی کی طرف سے قائد ایوان منتخب ہوئے۔

 

انومولا ریونت ریڈی کو لوک سبھا انتخابات 2019 میں کانگریس امیدوار کے طور ملکاجگیری پارلیمانی سیٹ سے امیدوار بنایا گیا، اور انہوں نے ٹی آر ایس امیدوار مرری راج شیکھرا ریڈی کو شکست دی تھی۔ اس کے بعد، انہیں 20 ستمبر 2018 کو کانگریس کے تین ورکنگ صدور میں سے ایک مقرر کیا گیا۔

1

2006

زیڈ پی ٹی سی

مڈجل

آزاد

2

2007

ایم ایل سی

کوڈنگل

آزاد

3

2009

ایم ایل اے

ٹی ڈی پی

4

2014

ایم ایل اے

5

2018

کانگریس

6

2019

ایم پی

ملکاجگری

کانگریس

7

2023

ایم ایل اے

کاماریڈی

8

کوڈنگل

Tags:
Ayub Khan

Ayub Khan, MA (MCJ) MANUU, Managing Editor of Urdu Post, CEO of MAKS Media.

  • 1