Type to search

ٹی وی اور فلم

شہد کی مکھیوں کے درمیان انجلینا جولی نے کرایا فوٹو شوٹ

انجلینا شہد کی مکھی

ہالی ووڈ، 22 مئی (ذرائع) ہالی ووڈ کی مشہور اداکارہ انجلینا جولی اپنی خوبصورتی اور اداکاری کے لیے جانی جاتی ہے۔ حال ہی میں اداکارہ نے کچھ ایسا کیا ہے کہ ہر طرف انکی ہی بات ہورہی ہے۔

دراصل انہوں نے ایک فوٹو شوٹ کروایا ہے، یہ فوٹو شوٹ انہوں نے ورلڈ بیز (شہد کی مکھی) ڈے کے موقع پر کروایا ہے۔ انہوں نے شہد کی مکھیوں کے جھنڈ کے درمیان فوٹو شوٹ بھی کروایا۔

 

ہالی ووڈ اداکارہ انجلینا جولی کا نام ان اداکاراؤں میں شمار ہوتا ہے جو نہ صرف پروفیشنل لائف بلکہ پرسنل لائف میں ہمیشہ کچھ نہ کچھ الگ کرنے کو لیکر بحث میں رہتی ہے۔

انجلینا جولی کی پیدائش 4 جون 1975کو لاس انجلیس، کیلفورنیا میں ہوئی۔ آنجلینا جولی نے اپنی ماں کی ضد پر ماڈلنگ شروع کی تھی۔ اس وقت وہ صرف 11 سال کی تھی۔

انجلینا نے شہد کی مکھیوں کے پالن کو بڑھاوا دینے کے لیے آگے آئی۔ اسکے لیے انہوں نے بے حد خطرناک فوٹو شوٹ کروایا۔

اس بار انجلینا جولی اپنے فوٹو شوٹ کو لیکر بحث میں ہے، جولی کا یہ ویڈیو سوشل میڈیا پر کافی تیزی سے وائرل ہورہا ہے۔

تصویر میں صاف دیکھ رہا ہے کہ مکھیاں انکے جسم پر چپکی ہوئی ہے۔ فوٹو شو کے دوران انہوں نے ایک آف شولڈر بلاؤز پہنا ہوا ہے۔ یہ مکھیاں ڈین ونٹرس کی تھی۔

انجلینا کے اس فوٹو شوٹ کو کرنے والے فوٹوگرافر ڈین ونٹرس نے بتایا کہ قریب 18 منٹ تک اداکارہ مکھیوں کے درمیان بیٹھی رہی۔ ڈین نے کہا کہ میں شہد کی مکھیاں پالک ہوں ، وبا کے اس دور میں پورے عملے کے ساتھ اور زندہ مکھیوں کے ساتھ فوٹو شوٹ کرنا بالکل بھی آسان نہیں تھا۔

ڈین کے مطابق اس فوٹو شوٹ کے لیے انہوں نے 40 سال پرانے تکنیک کا استعمال کیا جو کہ ایوڈان نے اپنے آئکونیک پوٹریٹ ’دی بی کیپر‘ کے لیے کیا تھا۔

 

بتادیں کہ فوٹو شوٹ نیشنل جغرافیک کے تعاون سے کیا گیا تھا۔ حیران کر دینے والی بات رہی کہ انجلینا کے جسم پر 18 منٹ تک مکھیاں چپکی رہی تھی۔

ڈین ونٹرس کے مطابق شہد کی مکھیاں کو پر امن رکھنے کے لیے اور وہ انجلینا کو کچھ نقصان نہ پہچائے، اس بات پر کافی توجہ دی گئی۔ کافی منصوبوں کے مطابق اور احتیاط کے ساتھ یہ فوٹو شوٹ پورا ہوا تھا۔

نیشنل جغرافیک نے آفیشل انسٹاگرام اکاؤنٹ سے انجلینا کی تصویر اور ویڈیو شیئر کیا ہے۔ ساتھ ہی یہ فوٹو شوٹ کے پچھے لگی محنت کا بھی خلاصہ کیا ہے۔

میگزین نے فوٹو شیئر کرتے ہوئے اس فوٹو شو کے لیے انجلینا کی طرف ملے سپورٹ اور فوٹوگرافر کی طرف سے دو باتیں شیئر کی ہے۔ وہ لکھتے ہیں، انجلینا لمبے وقت سے یونیسکو اور گیرولین کے ساتھ کام کررہی ہے جو کہ شہد کی مکھیوں کے لیے ایک پہل ہے۔ اس کا مقصد 2500 بی ہائبس بننا ہے تاکہ 2025 تک 125 ملین شہد کی مکھیاں کی ری۔اسٹاک کیا جاسکے۔ اسکے ذریعہ 50 ویمن بی۔کیپرس کو بھی سپورٹ مل رہا ہے۔

 

View this post on Instagram

 

A post shared by National Geographic (@natgeo)

ویڈیو میں آپ دیکھ سکیں گے کہ انجلینا کے جسم پر ہزاروں شہد کی مکھیاں چل رہی ہوتی ہے اور وہ صرف ایک بار ہی اپنی گردن اور منہ ہلاتی ہے۔

سال 1982 میں آئی فلم لکینگ ٹو گیٹ آوٹ تھی، اس میں انجلینا بطور چائلڈ آرٹسٹ پردے پر پہلی مرتبہ نظر آئی تھی۔
اس فلم کے بعد ہی انجلینا کی قسمت چمک گئی۔ انسٹاگرام پر انجلینا اپنی ٹاپ لیس، بکنی بولڈ فوٹو شیئر کرکے سرخیوں میں رہتی ہے۔
گذشتہ دنوں وہ بریٹ پٹ کے ساتھ طلاق اور بچوں کی کسٹڈی کو لیکر بھی سرخیوں میں تھی۔

Tags:

You Might also Like